کرونا وائرس: سعودی عرب میں تمام اسکولوں میں تعلیمی سرگرمیاں معطل

کرونا وائرس کو پھیلنے سے روکنے کی غرض سے سعودی حکومت نے تمام اسکولوں میں تعلیمی سرگرمیاں معطل کر دی گئی ہیں اور ایک صوبہ کو بھی’ لاک ڈاؤن ‘کر دیا ہے

فائل تصویر سوشل میڈیا
فائل تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

سعودی عرب میں کرونا وائرس کو پھیلنے سے روکنے کے لیے تمام اسکولوں، جامعات اور فنی تعلیم کے اداروں میں آج سے تاحکم ثانی تدریسی سرگرمیاں معطل کردی گئی ہیں۔ واضح رہے کرونا وائرس کی ہی وجہ سےاس سے قبل سعودی حکومت نےعمرہ کو بھی کچھ وقت کے لئے معطل کیا تھا تاکہ مسجد حرام کوسینیٹائز کیا جا سکے۔

سعودی پریس ایجنسی نے وزارت تعلیم کا ایک بیان جاری کیا ہے جس میں واضح کیا گیا ہے کہ ’’تمام تعلیمی سرگرمیاں معطل کرنے کا فیصلہ بچّوں کے بہترین مفاد میں کیا گیا ہے۔ سعودی قیادت کو بچّوں کے تحفظ کے بارے میں تشویش لاحق ہے اور ان کی تدریس جاری رکھنے کے لیے مناسب متبادل مہیا کیا جائے گا اور اس مقصد کے لیے فاصلاتی نظام تعلیم کو بروئے کار لایا جائے گا۔‘‘

سعودی عرب کے وزیر تعلیم نے اسکولوں اور جامعات میں تدریسی سرگرمیوں کی معطلی کے عرصے میں ’’ورچوئل اسکولوں‘‘ اور فاصلاتی تدریس کو فعال کرنے کی ہدایت کی ہے۔

اس فیصلہ سے قبل سعودی عرب نے مشرقی صوبہ القطیف میں کرونا وائرس کو پھیلنے سے روکنے کے لیے سخت اقدامات کا اعلان کیا ہے اور اس صوبے پرعارضی طور پر لاک ڈاؤن نافذ کر دیا ہے۔ اس کے تحت القطیف اور ملک کے دوسرے علاقوں کے درمیان لوگوں کی آمد ورفت کو محدود کیا جا رہا ہے۔

دریں اثناء سعودی حکام نے اتوار کو کرونا وائرس کے چار نئے کیسوں کی تصدیق کی ہے۔ سعودی وزارت صحت نے اب تک مملکت میں گیارہ کیسوں کی اطلاع دی ہے۔ یہ تمام افراد گزشتہ ڈیڑھ ہفتے کے دوران ایران سے وطن لوٹے ہیں۔

وزارت کے ایک بیان کے مطابق جن چار نئے کیسوں کی تصدیق ہوئی ہے، یہ تمام سعودی شہری ہیں، یہ بھی حال ہی میں ایران کے سفر پر گئے تھے اور متحدہ عرب امارات کے راستے مملکت میں واپس آئے تھے۔