عراق میں بم دھماکہ، 21 لوگوں کی موت، 54زخمی

دھماکا ایک بارودی ڈیوائس کے پھٹنے سے ہوا ہے اوربازار میں دھماکے کے وقت لوگوں کی بڑی تعداد عیدالاضحیٰ سے ایک روز قبل کھانے پینے اورروزمرہ کے استعمال کی اشیاء کی خریداری میں مصروف تھی۔

فائل علامتی تصویر آئی اے این ایس
فائل علامتی تصویر آئی اے این ایس
user

قومی آوازبیورو

عراق میں مشرقی بغداد کے ایک بازار میں پیر کو ہوئے بم دھماکہ میں 21 شہریوں کی موت ہوگئی اور 54دیگر زخمی ہوگئے۔

ذرائع نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ بغداد کے مضافاتی صدر شہر میں واقع الحویلت بازار میں شام کو ہوئے بم دھماکہ میں 21 شہریوں کی موت ہوگئی۔ واقعہ میں 54دیگر افراد زخمی ہوئے ہیں۔ دھماکہ سے آس پاس کی دکانوں اور اسٹالوں کو بھی کافی نقصان پہنچا ہے۔


عراق کی سرکاری خبررساں ایجنسی کی اطلاع کے مطابق دھماکا ایک بارودی ڈیوائس کے پھٹنے سے ہوا ہے اوربازار میں دھماکے کے وقت لوگوں کی بڑی تعداد عیدالاضحیٰ سے ایک روز قبل کھانے پینے اورروزمرہ کے استعمال کی اشیاء کی خریداری میں مصروف تھی۔

عراق کی وزارت داخلہ نے اس واقعہ کو دہشت گردی قرار دیا ہے اور ایک بیان میں کہا ہے کہ صدرسٹی کی الحویلت مارکیٹ میں مقامی ساختہ دھماکاخیز ڈیوائس سے یہ حملہ کیا گیا ہے۔اس سے متعدد افراد ہلاک اور زخمی ہوئے ہیں۔بغداد کی آپریشنزکمان نے بم دھماکےکی تحقیقات شروع کردی ہے۔


فوری طورپر کسی گروپ نے اس دھماکے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔قبل ازیں جنوری میں سخت گیرجنگجو گروپ داعش نے بغداد میں ایک مصروف بازارمیں دُہرے خودکش بم دھماکے کی ذمے داری قبول کرنے کا دعویٰ کیا تھا۔اس دھماکے میں 32 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔گذشتہ تین سال میں داعش کا بغداد میں یہ سب سے بڑا حملہ تھا۔(یو این آئی اور العربیہ ڈاٹ نیٹ کےانپٹ کےساتھ)

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔