سرکاری اسپتالوں میں تیمارداروں کے لئے مفت سحری کا انتظام

نیلوفر اسپتال، ایم این جے اور دیگر اسپتالوں میں سحری کا انتظام کرنے والے نوجوانوں کے اس نیک جذبہ کی گولکنڈہ کے بزرگوں نے کافی ستائش کی اور کہا کہ وہ بے مثال کام انجام دے رہے ہیں۔

تصاویر ’ہیومینٹی فرسٹ فاؤنڈیشن‘ کے فیس بک صفحہ سے لی گئی ہیں
تصاویر ’ہیومینٹی فرسٹ فاؤنڈیشن‘ کے فیس بک صفحہ سے لی گئی ہیں
user

قومی آوازبیورو

حیدرآباد: رمضان المبارک کا پہلا عشرہ جاری ہے اور دنیا بھر کے مسلمان روزے کا اہتمام کر رہے ہیں۔ اس مہینہ میں جہاں زیادہ تر لوگ زیادہ ثواب حاصل کرنے کے لئے عبادت میں مشغول رہتے ہیں وہیں کچھ لوگ ایسے بھی ہے جو دوسروں کی مدد کر کے ان کے دکھ درد کو بانٹ کر خدمت خلق کی راہ اختیار کرتے ہیں۔

حیدرآباد کے کچھ نوجوانوں نے بھی خدمت خلق کا بیڑہ اٹھایا ہے اور اس کے لئے انہوں نے سرکاری اسپتالوں کے ان لوگوں کی مدد کرنے کا فیصلہ کیا جو اسپتال میں داخل اپنے رشتہ داروں اور عزیزوں کی دیکھ بھال کرنے کے لئے وہاں موجود ہیں۔ نوجوانوں کا یہ گروپ حیدرآباد کے سماجی کارکن مجید اللہ خان قادری کی نگرانی میں خدمت خلق کو انجام دے رہے ہیں۔

روزانہ سحری سے پہلے نوجوانوں کا قافلہ نکل پڑتا ہے، ان کی منزل سرکاری اسپتال ہوتے ہیں اور مقصد بالکل نیک و قابل ستائش ہے۔ ان نوجوانوں نے اس ماہ مقدس کے دوران اپنی معمولات کے علاوہ سرکاری اسپتالوں میں مریضوں کے ساتھ رہنے والے تیمارداروں کے لئے سحری کا انتظام کرنا اپنا مقصد بنا لیا ہے۔

رمضان المبارک کے دوران نیکی کے کام میں مصروف یہ نوجوان حیدرآباد کے قلعہ گولکنڈہ کے رہائشی ہیں۔ ان کی اس مساعی کی کافی ستائش کی جا رہی ہے۔ یہ نوجوان اپنے طور پرسرکاری اسپتالوں کے مریضوں کے ساتھ رہنے والے تیمارداروں کے لئے مفت میں سحری کا انتظام کر رہے ہیں کیونکہ اسپتالوں میں انہیں سحر میں کافی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

نوجوانوں کے گروپ کی جانب سے رات میں غذائی اشیاء کا انتظام کیا جاتا ہے اور پھر سحری کے وقت اپنی گاڑیوں پر یہ لوک بیشتر سرکاری اسپتالوں میں گھوم کر مریضوں روزے داروں کے لئے سحری کا انتظام کرتے ہیں۔ ان نوجوانوں کی جانب سے تمام سرکاری اسپتالوں میں مختلف غذائی اشیا پر مشتمل 100 تا 150 پیکٹس تقسیم کیے جا رہے ہیں۔

یہ نوجوان خدمت گار نیلوفر اسپتال، ایم این جے اور دیگر اسپتالوں میں سحری کا انتظام کر رہے ہیں۔ نوجوانوں کے اس نیک جذبہ کی گولکنڈہ کے بزرگوں نے کافی ستائش کی اور کہا کہ وہ بے مثال کام انجام دے رہے ہیں۔ نوجوانوں کا کہنا ہے کہ رمضان کے دوران مسلمان روزے رکھتے ہیں اور اسپتال میں موجود تیمارداروں کو سحری میں کافی پریشانی ہوتی ہے، لہذا ان تک سحری کے کھانے کو پہنچانا ہمیں ضروری لگا۔ نوجوان خدمت گاروں کا کہنا ہے کہ پورے ماہ رمضان میں وہ اس کام کو انجام دیتے رہیں گے۔

(یو این آئی ان پٹ کے ساتھ)

Published: 11 May 2019, 10:10 PM