’ماڈل ریاست‘ گجرات میں بدمعاش بے خوف، سابق رکن اسمبلی کا گولی مار کر قتل

گجرات میں سابق بی جے پی رکن اسمبلی جینتی بھانوشالی کا گولی مار کر قتل کر دیا گیا۔ خبروں کے مطابق انھیں چلتی ٹرین میں گولی ماری گئی ہے۔ بھانوشالی بھُج سے احمد آباد جا رہے تھے۔

قومی آوازبیورو

پی ایم مودی کے گجرات میں بگڑتے نظامِ قانون کو لے کر بی جے پی حکومت پر سوال اٹھنے لگے ہیں۔ تازہ معاملہ کٹاریا-سُربری اسٹیشن کے پاس کا ہے۔ خبروں کے مطابق گجرات بی جے پی کے سابق نائب صدر اور سابق رکن اسمبلی جینتی بھانوشالی کا چلتی ٹرین میں گولی مار کر قتل کر دیا گیا ہے۔ بتایا جا رہا ہے کہ ابڈاسا سے رکن اسمبلی رہے بھانوشالی بذریعہ ٹرین بھُج سے احمد آباد جا رہے تھے۔ راستے میں بدمعاشوں نے اے سی کوچ میں گھس کر بھانوشالی پر فائرنگ کی۔ اس فائرنگ میں موقع پر ہی جینتی بھانوشالی کی موت ہو گئی۔

خبروں کے مطابق واقعہ کو سیاجی نگر ٹرین میں انجام دیا گیا۔ کٹاریا-سُربری اسٹیشن کے پاس بدمعاشوں نے اے سی کوچ میں گھس کر بھانوشالی پر گولی چلا دی جس سے ان کی موقع پر ہی موت ہو گئی۔ واقعہ کی اطلاع ملنے کے بعد پولس موقع پر پہنچی اور لاش کو سرکاری اسپتال پہنچایا۔ بھانوشالی کے قتل کی خبر ملتے ہی ان کے حامیوں میں زبردست مایوسی اور ناراضگی پھیل گئی۔

قابل ذکر ہے کہ بھانوشالی بی جے پی کے سابق نائب صدر بھی رہ چکے ہیں۔ تقریباً 6 مہینے پہلے ان کے خلاف عصمت دری کا معاملہ درج کیا گیا تھا۔ سورت کی رہنے والی خاتون نے رکن اسمبلی کے خلاف درج کرائے گئے ایف آئی آر میں کہا تھا کہ انھوں نے ایک معروف فیشن ڈیزائن انسٹی ٹیوٹ میں داخلہ دلانے کے نام پر نومبر 2017 سے مارچ 2018 تک کئی بار اس کی عصمت دری کی۔ اس الزام کے بعد پارٹی نے انھیں معطل کر دیا تھا۔ حالانکہ متاثرہ نے بعد میں کیس واپس لے لیا تھا۔

Published: 8 Jan 2019, 6:39 AM