کشمیر: شہری ہلاکت کی مجسٹریل انکوائری کا حکم صادر، فوج کے خلاف ایف آئی آر درج

سری نگر: جموں وکشمیر انتظامیہ نے شمالی کشمیر کے ضلع کپواڑہ کے ترہگام میں بدھ کی شام پیش آئے ہلاکت کے واقعہ کی مجسٹریل انکوائری کے احکامات صادر کئے ہیں۔

دوسری جانب جموں وکشمیر پولس نے واقعہ کی نسبت فوج کے خلاف مختلف دفعات بشمول دفعہ 307 کے تحت ایف آئی آر درج کرلی ہے۔ تاہم فوج کے ترجمان کا کہنا ہے کہ فوجی اہلکار شدید پتھراؤ کے زد میں آگئے تھے جس کے بعد انہیں اپنے دفاع میں گولیاں چلانی پڑیں۔

واضح رہے کہ ضلع کپواڑہ کے ترہگام میں گزشتہ شام فوج کی احتجاجی نوجوانوں پر فائرنگ کے نتیجے میں 22 سالہ نوجوان خالد غفار ملک ولد عبدالغفار ملک جاں بحق ہوا۔

خالد غفار پیشے سے دکاندار تھا۔وہ پتھراؤ کرنے والے گروپ کا حصہ نہیں تھا بلکہ اپنی دکان پر بیٹھا ہوا تھا۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ ضلع مجسٹریٹ کپواڑہ خالد جہانگیر نے ترہگام میں پیش آئے واقعہ کی مجسٹریل انکوائری کے احکامات صادر کئے ہیں۔

انہوں نے بتایا ’ایڈیشنل ضلع مجسٹریٹ (ہندواڑہ) مظفر حسین کو انکوائری افسر مقرر کیا گیا ہے۔ انہیں تحقیقاتی عمل ایک ماہ کے اندر مکمل کرنے کے لئے کہا گیا ہے‘۔ دریں اثنا جموں وکشمیر پولس نے واقعہ کی نسبت فوج کے خلاف مختلف دفعات بشمول دفعہ 307 کے تحت ایف آئی آر درج کرلی ہے۔

سب سے زیادہ مقبول