ہندوستان اور چین کے مابین سرحدی امور پر بات چیت

مشرقی لداخ میں پچھلے تین ماہ سے جاری تعطل کے دوران ہونے والی میٹنگ میں اہم طور پر فوجیوں کے پیچھے ہٹنے اور تناؤ کو کم کرنے کے عمل پر بات چیت ہوگی۔

علامتی تصویر
علامتی تصویر
user

یو این آئی

نئی دہلی: ہندوستان اور چین کے سرحدی امور سے متعلق مشورے اور کوآرڈینیشن میکانزم (ڈبلیو ایم سی سی) کی آج مشرقی لداخ میں پیش آنے والے واقعات سے متعلق امور پر میٹنگ ہوگی۔ مشرقی لداخ میں پچھلے تین ماہ سے جاری تعطل کے دوران ہونے والی میٹنگ میں اہم طور پر فوجیوں کے پیچھے ہٹنے اور تناؤ کو کم کرنے کے عمل پر بات چیت ہوگی۔

دونوں ممالک کی فوجوں کے کور کمانڈروں کی میٹنگوں میں تعطل ختم کرنے میں ناکام رہنے کے بعد ہونے والی اس ملاقات کو بہت اہم سمجھا جارہا ہے۔ لائن آف ایکچول کنٹرول پر کچھ مقامات پر صورت حال جوں کی توں قائم کرنے میں چین کے ٹال مٹول کی وجہ سے اتفاق رائے قائم نہیں ہو پا رہی ہے۔ اس میٹنگ کے بعد سینئر کمانڈروں کی اگلی بات چیت کی راہ ہموار ہوسکتی ہے۔


قبل ازیں ڈبلیو ایم سی سی کی میٹنگ 24 جولائی کو ہوئی تھی۔ آج دونوں ممالک کے مابین سرحدی نظام کی 17 ویں میٹنگ ہے۔ چین کے گزشتہ مئی میں سرحد عبور کرنے کے بعد مشرقی لداخ میں گزشتہ تین ماہ سے دونوں فوجوں کے مابین تناؤ کی صورت حال قائم ہے۔

تعطل کو ختم کرنے کے لئے فوج کے کمانڈروں کے درمیان پانچ مرتبہ بات چیت ہوچکی ہے۔ گزشتہ 15 جون کو دونوں فوجیوں کے مابین وادی گلوان میں ایک پُرتشدد تصادم بھی ہوا تھا جس میں ہندوستان کے 20 فوجی شہید ہوگئے تھے۔ اس تصادم میں چین کو بھی بڑی تعداد میں فوجی نقصان ہوا ہے، حالانکہ چین نے سرکاری طور پر اس تعداد کو ظاہر نہیں کیا ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔