قومی آواز بلیٹن: پوری دنیا میں کورونا کا قہر جاری، مرنے والوں کی تعداد 19 ہزار سے تجاوز

اٹلی جہاں گزشتہ دو دن سے اموات میں کمی کا رجحان دکھ رہا تھا، لیکن کل ایک دن میں 743 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔ اسپین اور برطانیہ میں ہلاکتوں میں اضافہ ہوا ہے

تصویر سوشل میڈیا
تصویر سوشل میڈیا
user

قومی آوازبیورو

پوری دنیا کورونا وائرس کے پھیلاؤ سے پریشان اور خوفزدہ ہے۔ تازہ اعداد و شمار کےمطابق کورونا وائرس سے مرنے والوں کی تعداد 19 ہزار سے زیادہ ہو گئی ہے اور متاثرین کی تعداد ساڑھے چار لاکھ کی جانب گامزن ہے۔

پاکستان میں لاک ڈاؤن کا اعلان

پاکستان کے وزیراعظم عمران خان نے کورونا کے بڑھتے معاملوں کے پیش نظر ملک میں لاک ڈاؤن کا اعلان کر دیا ہے۔ کہا جا رہا ہے کہ عمران خان نے یہ لاک ڈاؤن میڈیا کے دباؤ میں کیا ہے۔ واضح رہے پاکستان میں بدھ کے روز کورونا وائرس سے متاثرین کی کل تعداد 1000 ہو چکی ہے۔ پاکستان کے صوبہ سندھ میں سب سے زیادہ 413 لوگ اس وائرس سے متاثر ہیں جبکہ راجدھانی اسلام آباد میں 16 معاملے سامنے آئے ہیں۔

برطانیہ کے شہزادہ چارلس بھی کورونا وائرس کے شکار

دنیا بھر میں کورونا وائرس کے سوا چار لاکھ سے زیادہ کیسز ہو گئے ہیں۔ کورونا کے تیزی سے پھیلنے کی وجہ سے دنیا کے کئی ممالک میں مکمل لاک ڈاؤن کیا جا چکا ہے۔ برطانیہ میں کورونا کے معاملوں میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے۔ اسی بیچ خبر آئی ہے کہ برطانیہ کے شہزادہ چارلس میں کورونا وائرس پایا گیا۔ برطانوی شہزادہ چارلس کرونا وائرس کا شکار ہو گئے ہیں اس کی تصدیق بکنگھم پیلس نے بھی کر دی ہے۔

کابل میں گرودوارہ پر مسلح افراد کا حملہ

جس وقت پوری دنیا کورونا وائرس کی وبا سے جوجھ رہی ہے اس وقت افغانستان کے دارالحکومت کابل سے خبر آئی ہے کہ نامعلوم مسلح افراد نے سکھوں کی عبادت گاہ پرحملہ کیا ہے جس میں ایک بچے سمیت 25 لوگوں کی جان چلی گئی ہے۔ حملہ آوروں کے ساتھ خودکش بمبار ہونے کا شبہ بھی ظاہر کیا جا رہا ہے، جس وقت حملہ ہوا ہے اس وقت گرودوراہ میں 200 سے زائد افراد موجود تھے۔

'رائٹرز' کے مطابق افغانستان کی پارلیمان کے ایک رکن نے بتایا ہے کہ کچھ نامعلوم مسلح افراد جن کے ہمراہ خودکش بمبار بھی موجود تھے انہوں نے کابل میں سکھوں کے ایک مذہبی کمپلیکس پر حملہ کیا ہے۔ حملہ آوروں کے بارے میں کہا جا رہا ہے کہ ان کا تعلق داعش سے ہے۔

چدامبرم نے مودی کو بتایا کمانڈر

کانگریس کے سینئر رہنما اور سابق وزیر خزانہ پی چدامبرم نے لاک ڈاؤن پر عوام سے عمل کرنے کی اپیل کرتے ہوئے وزیر اعظم کو کمانڈر اور عوام کو سپاہی کہا ہے۔ اسی کے ساتھ ہی ہریانہ پردیش کانگریس کمیٹی کے ترجمان وید پركاش ودروہی نے عوام سے وزیر اعظم نریندر مودی کی جانب سے اعلان کردہ 21 دن کے ملک گیر لاک ڈاؤن کو کامیاب بنا کر کورونا وائرس کو شکست دینے میں اپنا تعاون پیش کرنے کی اپیل کی ہے۔

کشمیر میں ہزاروں شادیاں منسوخ اور تعزیتی مجالس معطل

دنیا میں ہر سو خوف و دہشت پیدا کرنے والے کورونا وائرس کے پیش نظر وادی کشمیر میں جہاں ایک طرف تمام تر مذہبی و سماجی اجتماعات و تقریبات معطل ہیں وہیں ہزاروں کی تعداد میں شادیاں منسوخ ہوئی ہیں اور تعزیتی مجالس بھی معطل کی جا رہی ہیں۔ ایک تخمینے کے مطابق وادی میں 25 اپریل سے شروع ہونے والے ماہ رمضان سے قبل قریب 25 ہزار شادیاں طے تھیں لیکن ان میں سے بیشتر شادیوں کی تقریبات کو منسوخ کیا جا رہا ہے اب اگر کچھ شادیاں انجام پذیر ہوئیں تو وہ انتہائی سادگی کے ساتھ انجام دی جائیں گی۔

ہندوستانی معیشت کو 120 ارب ڈالر خسارے کا خدشہ

پی ایم مودی نے جب 24 مارچ کو ملک سے خطاب کرتے ہوئے یہ اعلان کیا تھا کہ پورا ملک 21 دنوں کے لیے لاک ڈاؤن کیا جا رہا ہے، تو ساتھ ہی انھوں نے یہ بھی اشارہ دیا تھا کہ اس کا ملک کی معیشت پر بہت گہرا اثر پڑے گا۔ ایسی صورت میں جب کہ ہندوستان کی معیشت پہلے سے ہی خستہ حالی کی شکار ہے، کورونا وائرس کی وجہ سے اٹھائے جا رہے اقدامات کا اثر بھی بہت زیادہ اس معیشت پر پڑتا ہوا نظر آ رہا ہے۔ ماہرین نے ایک اندازہ لگاتے ہوئے بتایا ہے کہ ان 21 دنوں کے اندر ملک کی معیشت کو 120 ارب ڈالر کا خسارہ اٹھانا پڑ سکتا ہے۔

’دنیا سنگین بحران کی طرف گامزن‘

انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف) کی صدر کرسٹینا جارجیوا نے متنبہ کیا ہے کہ انہیں خدشہ ہے کہ کورونا وائرس کے پھیلاؤ سے دنیا بحران کی جانب جا رہی ہے۔ عالمی میڈیا کی رپورٹ کے مطابق واشنگٹن میں ان کے دفتر کی جانب سے جاری بیان میں ان کا کہنا تھا کہ وبا کے پھیلاؤ سے اب تک 80 ممالک اس کے نتائج سے نمٹنے کے لیے آئی ایم ایف سے رابطہ کر چکے ہیں۔ یہ بیان جی 20 وزرا خارجہ اور مرکزی بینک کے گورنرز کے درمیان کورونا وائرس کی وجہ سے ہونے والے آن لائن اجلاس کے بعد سامنے آیا۔

ہندوستان میں 13 لاکھ لوگوں کے متاثر ہونے کا خدشہ!

ہندوستان میں اس وقت کورونا کی زد میں آنے والے مریضوں کی تعداد 600 کے قریب پہنچ چکی ہے، لیکن اس تعداد کے آئندہ دنوں میں تیزی کے ساتھ بڑھنے کا اندیشہ ظاہر کیا جا رہا ہے۔ ہندوستان میں کورونا سے متعلق تحقیق کرنے والے کو-اِنڈ-19 اسٹڈی گروپ میں شامل محققین نے موجودہ اعداد و شمار پر باریکی سے مطالعہ کرنے کے بعد یہ اندیشہ ظاہر کیا ہے کہ ہندوستان میں اس وائرس کے پھیلنے کا پیٹرن اٹلی اور امریکہ کی طرح ہی ہے جہاں شروع میں کم مریض سامنے آئے تھے اور پھر اچانک مریضوں کی تعداد تیزی کے ساتھ بڑھنے لگی۔ قابل ذکر ہے کہ ہندوستان میں اب تک اس وائرس کی زد میں آنے سے 11 افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ کو-اِنڈ-19 اسٹڈی گروپ کا اس سلسلے میں کہنا ہے کہ حالات اگر ایسے ہی رہے تو مئی کے دوسرے ہفتہ تک ہندوستان میں 13 لاکھ کورونا کے مریض ہو سکتے ہیں۔

    Published: 25 Mar 2020, 8:05 PM
    next