بنگال میں 30 اکتوبر تک نافذ رہے گا رات کا کرفیو

ریاستی حکومت کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں بتایا گیا ہے کہ رات کا کرفیو آج سے پہلے کی طرح نافذ ہو جائے گا۔ لوگ رات 11 بجے سے صبح 5 بجے تک بغیر کسی وجہ کے سفر نہیں کریں گے۔

کولکتہ پولیس، تصویر آئی اے این ایس
کولکتہ پولیس، تصویر آئی اے این ایس
user

یو این آئی

کلکتہ: کلکتہ میں آج 20 اکتوبر سے پہلے ہی طرح رات کا کرفیو نافذ کردیا گیا ہے۔ بنگال میں 30 اکتوبر تک لاک ڈاؤن کی پابندیاں نافذ ہیں، لیکن وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی کی ہدایات پر ریاستی حکومت نے درگا پوجا کے پیش نظر رات کے کرفیو میں بھی نرمی کردی تھی۔ درگا پوجاکے موقع پر رت 11بجے سے شام 5بجے تک کے کرفیوکو ختم کر دیا گیا تھا۔

اب ریاستی حکومت کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں بتایا گیا ہے کہ رات کا کرفیو آج سے پہلے کی طرح نافذ ہو جائے گا۔ لوگ رات 11 بجے سے صبح 5 بجے تک بغیر کسی وجہ کے سفر نہیں کریں گے۔ یہ بات قابل غور ہے کہ درگا پوجا کے پیش نظر بنگال حکومت نے پابندیوں سے چھوٹ دیتے ہوئے ریستوران اور کیٹرنگ کی دکانوں کو معمول کے مطابق کھولنے کی اجازت دے دی تھی۔ ریستوران اور دکانوں کو 10 اکتوبر سے 20 اکتوبر کے درمیان چھوٹ دی گئی تھی


کورونا کے بڑھتے ہوئے معاملات نے ریاستی انتظامیہ اور ماہرین صحت کے خدشات کو بھی بڑھا دیا ہے۔ پچھلے کچھ دنوں سے جس طرح سے کولکاتا اور اس سے ملحقہ اضلاع میں کورونا مریضوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے، ماہرین نے خدشہ ظاہر کیا تھا کہ اس بار ہریدوار کے کمبھ کی طرح درگا پوجا بھی ایک سپر اسپریڈر ثابت ہوسکتی ہے۔

گزشتہ سال کی طرح ریاستی حکومت اور کلکتہ ہائی کورٹ نے منتظمین کو ہدایت دی تھی کہ کورونا سے متعلقہ پابندیوں پر عمل کریں، لیکن چند پنڈالوں کے علاوہ تمام مقامات پر کورونا پروٹوکول کو کھلے عام اڑایا جا رہا تھا۔ یہاں تک کہ ریاستی حکومت کی بار بار اپیلوں اور تیسری لہر کے بارے میں ماہرین کی جانب سے بار بار انتباہ کے باوجود پنڈال میں چلنے والے زیادہ تر لوگ ماسک کا استعمال بھی نہیں کر رہے تھے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔