بی جے پی نے سماج وادی پارٹی کے کاموں کو اپنا بتایا: اکھلیش

اکھلیش یادو نے کہا کہ ایس پی حکومت کے وقت ارئی، قنوج، اعظم گڑھ، سہارنپور، بدایوں، باندہ، شاہجہاں پور، بستی، بہرائچ، فیروزآباد، فیض آباد وغیرہ اضلاع میں ایک درجن سے زیادہ میڈیکل کالجوں کا قیام کیا تھا۔

اکھلیش یادو، تصویر یو این آئی
اکھلیش یادو، تصویر یو این آئی
user

یو این آئی

لکھنؤ: سماج وادی پارٹی (ایس پی)کے سربراہ اکھلیش یادو نے آج کہا کہ اپنے ساڑھے چار سال کی میعاد کار میں بی جے پی حکومت نے ایس پی کے ترقیاتی کاموں کے سہارے ہی گزار دیئے۔ کوئی کام کیا نہیں صرف اقتدار کی مدہوشی میں پڑے رہے۔ اب عوام میں اپنی کارگزاریوں کے تئیں سخت اشتعال کو دیکھتے ہوئے بی جے پی حکومت بدحواسی میں الٹے سیدھے اعلانات کرکے عوام کو گمراہ کرنے کا تانا بانا بن رہی ہے۔ لیکن بی جے پی کو اس کچھ حاصل ہونے والا نہیں ہے۔

اکھلیش یادو نے کہا کہ سچ تو یہ ہے کہ ریاست میں بی جے پی حکومت کے پاس شمار کے لئے ایک بھی حصولیابی نہیں ہے۔ ترقی رکی ہوئی ہے لیکن سماج وادی حکومت کے کاموں کو ہی اپنا بتا کر بی جے پی حکومت لوگوں کو جھانسا دے رہی ہے۔ بی جے پی کی یہ دھوکہ بازی ہندوستانی سیاست کو شرمندہ کرتی ہے۔


بی جے پی حکومت میں طبی خدمات کی بدحالی کی وجہ سے کورونا وبا کے دوران ہزاروں جانیں چلی گئیں۔ لوگوں کو نہ بستر ملے نہ آکسیجن، دواؤں کی کالا بازاری ہوتی رہی۔ انتظامیہ پنگو بنا رہا ہے۔ سماج وادی حکومت میں رائے بریلی اور گورکھپور میں ایمس کے قیام کے لئے مفت زمین فراہم کی تھی۔ جسے بی جے پی حکومت ڈھنگ سے چلا تک نہیں سکی۔

لکھنؤ میں کینسر اسپتال سماجوادی پارٹی نے بنوایا، بی جے پی اقدار میں اسے نظر انداز کیا گیا۔ سماج وادی حکومت کے وقت ارئی (جالون) قنوج، اعظم گڑھ، سہارنپور، بدایوں، باندہ، شاہجہاں پور، بستی، بہرائچ، فیروزآباد، فیض آباد وغیرہ اضلاع میں ایک درجن سے زیادہ میڈیکل کالجوں کا قیام کیا تھا۔


سابق وزیر اعلی نے کہا کہ 32 میڈیکل کالج دینے کا دعوی پوری طرح حقیقت سے پرے ہے۔ 16 اضلاع میں تو میڈیکل کالج کا خاکہ ہی مشتبہ ہے۔ سماج وادی حکومت کے وقت اسپتالوں میں 9 ہزار بستروں کا انتظام کیا گیا تھا۔ بی جے پی حکومت میں ایک بھی مزید بستر کا انتظام نہیں کیا گیا ہے۔ کورونا کی تیسری لہر آنے کے امکانات ہیں۔ جو پہلے سے بھی زیادہ مہلک ثابت ہوسکتی ہے۔

قومی آواز اب ٹیلی گرام پر بھی دستیاب ہے۔ ہمارے چینل (qaumiawaz@) کو جوائن کرنے کے لئے یہاں کلک کریں اور تازہ ترین خبروں سے اپ ڈیٹ رہیں۔