ہندوستان کو کب تک اقوام متحدہ کے فیصلے کے عمل سے دور رکھا جائے گا: مودی

آج پوری عالمی برادری کے سامنے ایک بہت بڑا سوال ہے کہ جس ادارے کی تشکیل آج سے 75 برس پہلے اس وقت کی صورت حال کے پیش نظر ہوئی تھی، اس کی ہیئت کی آج بھی معنویت ہے۔

تصویر یو این آئی
تصویر یو این آئی
user

یو این آئی

وزیراعظم نریندر مودی نے اقوام متحدہ کی ہیئت میں تبدیلی کو وقت کی ضرورت قرار دیتے ہوئے سنیچر کو سوال کیا کہ عالمی تنظیم کے فیصلے کے عمل سے ہندوستان کو کب تک الگ رکھا جائے گا۔

مسٹر مودی نے اقوام متحدہ اجلاس سے ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعہ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’’اقوام متحدہ میں تبدیلی ، نظام میں تبدیلی، ہیئت میں تبدیلی آج کے دور کا تقاضہ ہے۔ ہندوستان میں اقوام متحدہ کی جو عزت ہے وہ بہت کم ممالک میں ہے۔ یہ بھی حقیقت ہے کہ ہندوستان کے لوگ اقوام متحدہ میں اصلاحاتی عمل کے پورا ہونے کا طویل عرصے سے انتظار کررہے ہیں۔ آخر کب تک ہندوستان کو اقوام متحدہ کی فیصلے کےعمل سے دور رکھا جائے گا۔‘‘

انہوں نے کہاکہ آج پوری عالمی برادری کے سامنے ایک بہت بڑا سوال ہے کہ جس ادارے کی تشکیل آج سے 75 برس پہلے اس وقت کی صورت حال کے پیش نظر ہوئی تھی، اس کی ہیئت کی آج بھی معنویت ہے۔

عالمی امن میں ہندوستان کے کردار کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ’’جس ملک نے برسوں تک عالمی معیشت کی رہنمائی کرنے اور برسوں کی غلامی، دونوں کو جھیلا ہے، جس ملک میں ہورہی تبدیلیوں کا اثر دنیا کے بہت بڑے حصے میں پڑتا ہے، اس ملک کو آخر کب تک انتظار کرنا پڑے گا؟ ہندوستان اقوام متحدہ میں اپنے تعاون کو دیکھتے ہوئے اپنا کردار دیکھ رہے ہیں۔

next