دنیا کا سب سے بڑا کھیل میلا آج سے شروع، پہلا میچ سعودی عرب بنام میزبان روس

21 ویں فیفا ورلڈ کپ کا پہلا میچ آج میزبان روس کا سامنا سعودی عرب سے ہوگا، ایک ماہ تک چلنے والے مقابلے میں 32 ٹیمیں حصہ لے رہی ہیں۔

فٹ بال کے سب سے بڑے تہوار فیفا ورلڈ کپ کے 21 ویں ایڈیشن کا آغاز آج سے یہاں کے لجنكی اسٹیڈیم میں ہو رہا ہے۔ جس میں دنیا کی 32 ٹیمیں فٹ بال کے سرتاج بننے کے لئے جدوجہد کریں گی، روس کو پہلی بار ورلڈ کپ کی میزبانی ملی ہے، وہ میزبان کے طور پر ہی اس ورلڈ کپ کے لئے کوالیفائی کر پایا ہے۔ ورلڈ کپ کے پہلے میچ میں آج روس کا مقابلہ سعودی عرب سے ہوگا۔ دونوں ہی ٹیمیں خطاب جیتنے کے دعویداروں میں نہیں مانی جا رہی ہیں لیکن روس اپنے حامیوں کی موجودگی میں فتح کے ساتھ ٹورنامنٹ کا آغاز کرنا چاہے گا۔

گزشتہ دو برسوں میں روس کی کارکردگی کافی خراب رہی ہے، 2016 یورپی چیمپئن شپ کے بعد سے میزبان ٹیم نے کل 19 میچ کھیلے ہیں جن میں صرف 6 میں جیت درج کی ہے۔ روسی ٹیم اکتوبر 2017 کے بعد سے ایک بھی میچ جیتنے میں کامیاب نہیں ہو پائی ہے، جو ٹیم کی موجودہ صورتحال کی عکاسی کرتی ہے۔

سعودی عرب کے علاوہ روس کے گروپ میں یوراگوئے اور مصر کی ٹیمیں شامل ہیں، ان میں سے صرف یوراگوئے کو ہی بااثر ٹیم مانا جا رہا ہے، ایسے میں گروپ سے دیگر تمام ٹیموں کے پاس اگلے راؤنڈ میں داخل ہونے کا برابر کا موقع ہے، میزبان ٹیم میں کوئی بھی اسٹار کھلاڑی موجود نہیں ہے اور ٹورنامنٹ سے پہلے اس کے دو مضبوط ڈفینڈر وکٹر واسن اور جارجی جھكيا کے علاوہ فارورڈ الیگزینڈر كوكورین چوٹ کی وجہ سے ٹورنامنٹ سے باہر ہو گئے ہیں۔

کوچ چرچےشوو کی ٹیم کی سب سے بڑی کمزوری اس کا ڈیفنس ہے اور وکٹر اور جھكيا کے زخمی ہونے کے بعد ان کے پاس کوئی ایسا نام نہیں ہے جو ڈیفنس کو مضبوط کر سکے، تاہم، مداحوں کو گول کیپر ایگور ایکنفیو سے بہتر کارکردگی کی توقع ہوگی، ٹیم کے اٹیک کی ذمہ داری اسٹرائیکر فیڈر سمولوو پر ہوگی، جنہوں نے کریسنوڈار ایف سی سے کھیلتے ہوئے 2015-16 اور 2016-17 سیزن میں روس کی فرسٹ کلاس لیگ میں سب سے زیادہ گول کئے۔

جرمنی میں ہوئے 2006 ورلڈ کپ کے بعد پہلی بار اس ٹورنامنٹ میں حصہ لے رہی سعودی عرب کی سب سے بڑی طاقت ٹیم میں موجود کھلاڑیوں کی یکجہتی ہے۔ ٹیم کے زیادہ تر کھلاڑی سعودی پریمیئر لیگ میں کھیلنے کی وجہ سے ان کے درمیان اچھا تال میل ہے۔ تاہم، روس کی طرح سعودی ٹیم میں بھی کوئی بڑا ستارہ نہیں ہے، لیکن مڈ فیلڈ کی جان یحیی الشہری پر سب کی نگاہیں ٹکی ہوں گی۔

روس میں 11 شہروں کے 12 اسٹیڈیم میں ورلڈ کپ کے میچ کھیلے جائیں گے، ان میں کچھ اسٹیڈیم کو خاص طور پر فیفا ورلڈ کپ کے لئے تیار کیا گیا ہے، پہلا میچ جس اسٹیڈیم میں کھیلا جائے گا، اسی اسٹیڈیم میں فائنل میچ بھی کھیلا جائے گا۔

سب سے زیادہ مقبول